• پاکستان کی عید کے دن افغان صدارتی محل پر راکٹ حملوں کی مذمت

    ترجمان دفترخارجہ ڈاکٹرمحمد فیصل نے افغان صدارتی محل پر راکٹ حملوں کی مذمت کی ہے۔ترجمان دفترخارجہ کا اپنے مذمتی بیان میں کہناتھا کہ عید کے پُرمسرت موقع پر اس طرح کے حملے قابل مذمت ہیں۔ آج افغان دارالحکومت کابل میں نمازعید کے سرکاری اجتماع کے قریب راکٹ حملےہوئے ہیں، حملوں کے وقت افغان صدر اشرف غنی اجتماع سے خطاب کررہے تھے۔جوابی کارروائی میں افغان سیکیوریٹی فورسز نے 2حملہ آوروں کو ہلاک کردیا۔ افغان میڈیا کے مطابق راکٹس کا نشانہ صدارتی محل تھا۔ حملوں کے بعد افغان صدر اشرف غنی نے کہا تشدد پسند عناصر افغان عوام کی ترقی کا سفر نہیں روک سکتے۔کابل میں صدر اشرف غنی کی عید گاہ مسجد میں عید تقریب پر ٹرک میں سوار حملہ آوروں نے میزائلوں سے حملہ کیا۔ سیکیوریٹی فورسز کی حملہ آوروں سے جھڑپیں جاری ہیں جبکہ ان جھڑپوں میں دو حملہ آور مارے جاچکے ہیں۔ افغان صدرکاکہناتھا کہ چند گروہ ابھی بھی تشدد پسند پالیسی پر عمل پیرا ہیں۔واضح رہے کل ہی افغان حکومت نے عید الاضحیٰ کے موقع پرتین ماہ کے لیے طالبان سے جنگ بندی کااعلان کیاتھا۔ خبر رساں ادارے کے مطابق افغان صدر اشرف غنی نے طالبان کو تین ماہ کی جنگ بندی کی پیش کش کی ہے، جنگ بندی کی پیشکش آج سے 12 ربیع الاول تک تین ماہ کے لیے کی گئی ہے۔افغان صدر کے مطابق مشروط جنگ بندی اُس وقت تک جاری رہے گی جب تک طالبان جنگ بندی کا احترام کریں گے۔ افغان حکام کے مطابق یہ سیزفائر صرف طالبان کے ساتھ کیا گیا ہے، اس میں اسلامک اسٹیٹ (داعش) سمیت دیگر شدت پسند گروپ شامل نہیں ہیں۔ دوسری جانب طالبان نے افغان حکومت کے طرف سے کی جانے والی جنگ بندی کی مشروط پیشکش مسترد کر دی ہے۔ افغان طالبان نے حکومتی پیشکش مسترد کرتے ہوئے اپنے حملے جاری رکھنے کا اعلان کیا ہے، ان کا کہنا ہے کہ جنگ بندی سے صرف امریکا کو ہی فائدہ ملے گا جس کی وجہ سے حملے نہیں روکے جائیں گے۔ پاکستان نے افغان حکومت کی جنگ بندی کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ اسلام آباد ایسے تمام اقدامات کی حمایت کرتا ہے، جس سے افغانستان میں دیر پا امن قائم ہو۔ ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ افغانستان کے جشن آزادی کے موقع پر یہ اعلان اور زیادہ اہمیت کا حامل ہے۔پاکستان عیدالاضحیٰ کے تہوار کو تمام فریقین کی جانب سے سیزفائر کے لیے مناسب موقع سمجھتا ہے اور ایسے اقدامات امن و استحکام کا ماحول پیدا کرنے میں مددگار ہوں گے۔ امریکا نے بھی افغان حکومت کی جانب سے طالبان کو جنگ بندی کی پیش کش کا خیرمقدم کیا ہے۔امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے کہا کہ صدر اشرف غنی کا اعلان افغان عوام کی خواہشات کی ترجمانی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ گزشتہ جنگ بندی پر یہ بات واضح ہوگئی تھی کہ افغان عوام جنگ کا خاتمہ چاہتےہیں اور امید ہےکہ نیا سیز فائر افغانستان میں امن کے لیے مددگار ثابت ہوگا۔ مائیک پومپیو کے مطابق امریکا اور اتحادی اس اقدام کی حمایت کرتے ہیں اور طالبان سے بھی مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اس پیش کش کا مثبت جواب دیں۔ واضح رہے کہ رواں برس عید الفطر کے موقع پر بھی افغان حکومت نے طالبان کے ساتھ جنگ بندی کا اعلان کیا تھا۔

  • وزیراعظم عمران خان نے کشمیر پر بھارت کو مذاکرات کی دعوت دیدی

    وزیراعظم عمران خان نے کشمیر پر بھارت کو مذاکرات کی دعوت دے دی۔ انہوں نے کہا بات چیت کے ذریعے تنازعات کا حل غربت مٹانے اور برصغیر کے عوام کی زندگیوں میں بہتری لانے کا آسان نسخہ ہے۔ عمران خان نے سوشل میڈیا کی ویب سائٹ پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا آگے بڑھنے کیلئے پاکستان اور بھارت کو مذاکرات کرنا ہونگے، کشمیر سمیت تمام تنازعات پر بات چیت ضروری ہے۔ انہوں نے کہا غربت کے خاتمے کا بہتر طریقہ مذاکرات اور تجارت ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے اپنے ٹویٹ میں مزید کہا تقریب حلف برداری میں شرکت پر نوجوت سنگھ سدھوکا مشکور ہوں، سدھو امن کے سفیر تھے، پاکستانی عوام نے محبت دی، بھارت میں سدھو کے مخالفین خطے میں امن کو نقصان پہنچا رہے ہیں، امن کے بغیر عوام ترقی نہیں کر سکتے۔ خیال رہے سابق بھارتی کرکٹر نوجوت سدھ سنگھ وزیراعظم عمران خان کی حلف برداری تقریب میں شرکت کے لئے اسلام آباد پہنچے تھے۔ اس موقع پر 1992 کی ورلڈ کپ کی فاتح پاکستانی ٹیم بھی موجود تھی۔

  • (ن) لیگ نے صدارتی امیدوار کیلئے اعتزاز احسن کا نام مسترد کردیا

    لاہور: مسلم لیگ (ن) نے صدارتی امیدوار کے لیے پیپلزپارٹی کے اعتزاز احسن کا نام مسترد کردیا۔ قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف اور مسلم لیگ (ن) کے صدر شہبازشریف کی زیرصدارت لاہور میں مسلم لیگ (ن) کا اجلاس ہوا جس میں اہم فیصلہ کیے گئے۔ ذرائع کے مطابق مسلم لیگ (ن) نے صدارتی امیدوار کے لیے پیپلزپارٹی کے اعتزاز احسن کی نامزدگی مسترد کرتے ہوئے کہا ہےکہ پیپلز پارٹی نے اعتزاز احسن کے نام پر اعتماد میں نہیں لیا، اعتزاز احسن دھرنے میں بھی اپوزیشن کو تقسیم کرنے کے ایجنڈے پر تھے۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ صدارتی امیدوار کی متفقہ نامزدگی پاکستان الائنس کے ذریعے کی جائے، پیپلزپارٹی نےاتفاق نہ کیا تو (ن) لیگ کے عبدالقادر بلوچ صدارتی امیدوار ہوں گے۔ ذرائع کے مطابق پاکستان الائنس کا اجلاس 24 اگست کو مری یا اسلام آباد میں ہو گا، الائنس کے ہر اجلاس میں تمام اپوزیشن جماعتوں کی قیادت شرکت کی پابند ہوگی۔ ذرائع کا بتانا ہےکہ مسلم لیگ (ن) نے نوازشریف کے لیے انصاف دو احتجاجی تحریک شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے، عید کے بعد احتجاجی تحریک کا پہلا جلسہ راولپنڈی میں ہوگا جب کہ تحریک میں اپوزیشن جماعتوں کو بھی شرکت کی دعوت دی جائے گی۔ ذرائع کے مطابق اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ عوام کو تحریک میں بتایا جائےگا کہ نوازشریف کا احتساب نہیں ہورہا بلکہ انتقام لیا جا رہا ہے، نوازشریف اور مریم نواز کا نام ای سی ایل میں رکھنا انتقامی کارروائی ہے، زرداری کی چھٹی کے دن ضمانت ہوجاتی ہے مگر نواز شریف کو انصاف نہیں ملتا۔ ذرائع نے بتایا کہ اجلاس میں بریفنگ دی گئی کہ مولانا فضل الرحمان نے مسلم لیگ (ن) سے بھرپور تعاون کی یقین دہانی کرائی، انہوں نے آج شہبازشریف سے فون پر گفتگو کرکے بھی انہیں تعاون کا یقین دلایا۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیاہے کہ اپوزیشن کو متحد کرنے کی کوشش کی جائے گی اور اس سلسلے میں پیپلزپارٹی کے رہنما رضا ربانی اور خورشید شاہ آج شہبازشریف سے ملاقات کریں گے۔

  • امریکا کا پاکستان کی نومنتخب حکومت سے بھی ’ ڈو مور‘ کا مطالبہ

    واشنگٹن: امریکی وزارت خارجہ کی نائب سیکرٹری ایلس ویلز نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کی بھارت اور افغانستان سمیت پڑوسی ممالک کے ساتھ پرامن تعلقات کی خواہش کا خیر مقدم کرتے ہیں۔ برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق امریکی محکمہ خارجہ میں جنوبی اور وسطی ایشیائی ممالک سے متعلق امور کی سربراہ ایلس ویلز نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان کے نومنتخب وزیراعظم عمران خان کی بھارت اور افغانستان سے پُر امن تعلقات کی خواہش کا خیر مقدم کرتے ہیں اور خطے میں قیام امن کے لیے امریکا پاکستان میں نئی حکومت کے ساتھ مل کر کام کرنے کا خواہاں ہے۔ ایلس ویلز نے پاکستان سے ’ڈو مور‘ کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ افغانستان میں قیام امن اور استحکام لانے میں پاکستان اہم اور کلیدی کردار ادا کرسکتا ہے، اس لیے ایک بار پھر پاکستان پر طالبان کے خلاف مزید اقدامات کرنے یا پھر طالبان کو مذاکرات کے لیے راضی کرنے پر زور دیتے ہیں۔ واضح رہے کہ وزیر اعظم کا عہدہ سنبھالنے کے بعد قوم سے اپنے پہلے خطاب میں وزیراعظم عمران خان نے اپنی خارجہ پالیسی سے متعلق کہا تھا کہ اُن کی حکومت بھارت اور افغانستان سمیت تمام پڑوسی ممالک کے ساتھ پُرامن تعلقات استوار رکھے گی۔

  • نواز شریف اور مریم نواز کا نام ای سی ایل میں ڈال دیا گیا

    سابق وزیراعظم نواز شریف اور ان کی صاحبزادی مریم نواز کا نام تاحکم ثانی ای سی ایل میں ڈال دیا گیا، وفاقی کابینہ کی منظوری کے بعد اقدام اٹھایا گیا۔ نواز شریف، مریم نواز کے نام ای سی ایل میں ڈالنے کی درخواست نیب نے کی تھی۔ ادھر اسلام آباد ہائیکورٹ نے سابق وزیراعظم نواز شریف، مریم نواز اور کیپٹن (ر) صفدر کی ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا کے خلاف اپیل پر فیصلہ موخر کر دیا، جسٹس اطہر من اللہ اور جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب پر مشتمل 2 رکنی بینچ نے اپیل پر سماعت کی۔ جسٹس اطہر من اللہ نے نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث سے کہا آپ کی اپیل موسم گرما کی تعطیلات کے بعد سماعت کیلئے مقرر ہے ، اس وقت تک سزا معطلی کی اپیل موخر کردیتے ہیں، ہم نہیں چاہتے دوسرے فریق کا کیس متاثر ہو۔

  • انسداد دہشتگردی کیلئے مشترکہ کوششیں ضروری ہیں: آرمی چیف

    آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا ہے دہشتگردی ایک بین الاقوامی ناسور ہے، انسداد دہشتگردی کیلئے مشترکہ کوششیں ضروری ہیں۔ آئی ایس پی آر کے مطابق، آرمی چیف نے دہشتگردی سے متاثرہ افراد کے عالمی دن پر اپنے پیغام میں کہا ہے کہ پاکستان 2 دہائیوں سے دہشتگردی کے خطرات کا سامنا کر رہا ہے، پاکستان کی مسلح افواج اور عوام نے بہادری سے دہشتگردی کا سامنا کیا، پاک فوج اور عوام نے مل کر دہشتگردی کو شکست دی۔ جنرل قمر جاوید باجوہ نے دہشتگردی سے متاثرہ افراد کو بھی خراج تحسین پیش کیا اور کہا دہشتگردی سے متاثر باہمت افراد کیساتھ اظہار یکجہتی کرتے ہیں، ہرطرح کی دہشتگردی کی مذمت کرتے ہیں، مشترکہ عزم سے دشمن قوتوں کو شکست دی جاسکتی ہے۔ انہوں نے کہا دیرپا امن و استحکام کیلئے تمام فورسز کی حمایت کرتے ہیں۔ آرمی چیف کا مزید کہنا تھا دشمن قوتوں کی پاکستان کو اندھیروں میں دھکیلنے کی کوششیں ناکام ہوچکیں، دشمن کی ناکامی کی وجہ ہمارا قومی عزم ہے۔