• سانحہ اوماڑہ ، پاکستان کا ایران بارڈر پر باڑ لگانے کا فیصلہ

    شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے سانحہ اورماڑہ کے بعد پاک ایران بارڈر پر باڑ لگانے کا فیصلہ کیا ہے، بارڈر کو پر امن اور محفوظ رکھنے کیلئے مشترکہ بارڈر سینٹر قائم ہوں گے۔ وفاقی وزیر خاجہ شاہ محمود قریشی نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا 18 اپریل کو سرحد پار سے 15 دہشتگرد داخل ہوئے، دہشتگردوں نے فرنٹیئر کور کی وردی پہن رکھی تھی، دہشتگردوں نے بسوں کو روکا، شناخت کر کے 14 پاکستانی شہید کیے، شہدا میں 10 جوانوں کا تعلق پاک بحریہ، 3 کافضائیہ اور ایک کا کوسٹ گارڈ سے تھا۔ وزیر خارجہ نے کہا بی آر اے نے بزئی ٹاپ واقعہ کی ذمہ داری قبول کرلی ہے، مصدقہ اطلاعات ہیں کہ یہ بلوچ دہشتگرد تنظیم کی کارروائی ہے، بی آر اے کے تربیتی کیمپ ایران کے سرحدی علاقے میں جبکہ تانے بانے افغانستان میں بھی ملتے ہیں۔ شاہ محمود قریش کا کہنا تھا بی آر اے میں کئی بلوچ دہشتگرد تنظیمیں بھی شامل ہیں، ایران کے وزیر خارجہ سے ٹیلی فون پر تفصیلی بات چیت ہوئی، ایرانی حکام کو تمام صورتحال سے آگاہ کر دیا ہے، کل وزیراعظم ایران کے دورےپر روانہ ہو رہے ہیں۔ وزیر خارجہ نے کہا ایران ہمارا برادر ملک ہے اور ہمارے دیرینہ تعلقات ہیں، واقعہ کے سپیشل فرانزک شواہد موجود ہیں، ایران کو بی آر اے کی کیمپس اور ان کے مقام سے آگاہ کر دیا، امید ہے ایران ان دہشتگردوں کیخلا ف ایکشن لے گا، حکومت نے سرحدی حساسیت کی وجہ سے پہلے ہی اقدامات اٹھائے۔

  • آئی ایم ایف پروگرام کو جلد مکمل کرنا چاہتے ہیں، حفیظ شیخ

    نو منتخب مشیر خزانہ حفیظ شیخ نے میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ انہوں نے آئی ایم ایف ڈائریکٹر سے بات کی ہے اور ان کو حکومت کی طرف سے پیغام دیا ہے کہ ہم مذاکرات کو آگے لے جانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف نے اپنی طرف سے اس پروگرام کے بارے میں یقین دہانی کرائی ہے، حکومت کا ارادہ ہے کہ آئی ایم ایف مشن جلد پاکستان آئے تاکہ اس عمل کو تیز کرکے پاکستان کے مفاد میں جلد از جلد مکمل کیا جائے۔ مشیر خزانہ نے مزید کہا کہ بجٹ کی تیاری کے حوالے سے میڈیم ٹرم اسٹریٹیجی پیپر ورک مکمل کرنے کیلئے ہدایات جاری کردی گئی ہیں۔ حفیظ عبدالحفیظ شیخ نے مشیر خزانہ کے عہدے کا چارج آج سنبھال لیا اور دفتر پہنچنے پر سینئر حکام نے ان کا استقبال کیا۔ یاد رہے ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ سندھ کے علاقے جیکب آباد میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد عبدل نبی شیخ پاکستان پیپلز پارٹی کے بانی ارکان میں سے تھے۔ وہ اقتصادی پالیسی سازی اور عمل درآمد کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں۔ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ نے ڈاکٹریٹ کی ڈگری بوسٹن یونیورسٹی امریکا سے حاصل کی اور ہارورڈ یونیورسٹی میں بطور پروفیسر خدمات انجام دیں۔ وہ 1990ء کے عشرے میں سعودی عرب میں ورلڈ بینک کے ڈائریکٹر اکنامک آپریشن تعینات رہے اور بینک کی طرف سے 21 ممالک میں خدمات سرانجام دیں۔ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ 2003ء سے 2006ء تک وفاقی وزیر برائے نجکاری اور سرمایہ کاری رہے۔ 2000ء سے 2002ء تک سندھ کے وزیر برائے خزانہ اور منصوبہ بندی جبکہ 2010ء سے 2013ء تک پاکستان کے 20ویں وزیر خزانہ کہ ذمہ داریاں سرانجام دیتے رہے۔ ان کے کے دور وزارت میں 5 ارب ڈالر کی 34 نجکاری کی ٹرانزیکشن ہوئیں۔ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ 2012ء میں پیپلز پارٹی کی طرف سے بہت متحرک رہے اور سینیٹر منتخب ہوئے۔

  • سابق حکومتوں کی 16 اہم شخصیات عمران خان کی کابینہ کا حصہ

    سابق حکومتوں کی 16 اہم شخصیات عمران خان کی کابینہ کا حصہ ہیں۔ مشیرخزانہ حفیظ شیخ، وزیر خارجہ شاہ محمود پیپلز پارٹی دور میں وفاقی وزیر رہے۔ شیخ رشید، نواز شریف اور پرویز مشرف کی کابینہ کا حصہ رہ چکے ہیں، فواد چودھری بھی پیپلزپارٹی اور پرویز مشرف کے ترجمان رہے۔ وزیر تعلیم شفقت محمود مشرف دور میں وزیر اور سیکرٹری اطلاعات پی پی رہے، فہمیدہ مرزا پیپلزپارٹی کے دورمیں سپیکر قومی اسمبلی تھیں۔ وزیر نجکاری محمد میاں سومرو مشرف دور میں چیئرمین سینیٹ رہے، اعظم سواتی پیپلزپارٹی دور میں جے یو آئی کی طرف سے وفاقی وزیر رہے۔ وفاقی وزرا عمرایوب اور خسرو بختیار بھی مشرف کابینہ کا حصہ تھے۔ وزیر ہوا بازی غلام سرور خان مشرف کابینہ اور پیپلزپارٹی کا حصہ رہے۔ فردوس عاشق اعوان، نور الحق قادری بھی زرداری کی کابینہ میں تھے، وزیر دفاعی پیداوار زبیدہ جلال مشرف دور میں وزیر تعلیم رہ چکی ہیں۔ وزیر برائے انسداد منشیات علی محمد مہر بھی مشرف دور میں وزیر اعلیٰ سندھ رہ چکے ہیں۔ وزیراعظم کے ترجمان ندیم افضل چن بھی زرداری دور حکومت کے اہم پارٹی رہنماؤں میں شامل تھے۔

  • شیخ رشید کا اسد عمر کو کابینہ میں واپس لانے کیلئے منانے کاعزم

    شیخ رشید نے اسد عمر کو کابینہ میں واپس لانے کیلئے منانے کا عزم کر دیا۔ انہوں نے کہا اسد عمر کے پاس جا کر درخواست کروں گا کہ وہ کابینہ کا حصہ رہیں، سابق وزیر خزانہ خود مستعفی ہوئے، صرف ایک وزیر کو نکالا گیا، حکومت 5 سال پورے کرے گی۔ وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا سازش کے تحت پیسہ سڑکوں اور پلوں پر لگایا گیا، ملک سرحدوں پر نہیں، معیشت پر حملوں سے ٹوٹتے ہیں، روس کے ٹوٹنے کی بنیادی وجہ معیشت کی تباہی تھی۔ انہوں نے کہا کابینہ سے صرف ایک وزیر کو نکالا گیا، اسد عمر نے استعفیٰ دیا، اسد عمر نے بہت محنت کی مگر کپتان کا فیصلہ بہرحال درست ہے، عمران خان جب حکومت میں آئے خزانہ نام کی کوئی چیز نہیں تھی۔ شیخ رشید کا کہنا تھا صرف ایک وزیر کو نکالا گیا ہے جس پر طوفان کھڑا کر دیا گیا، کپتان نے فیصلہ کرنا ہے کس کو کہاں کھڑا کرنا ہے، زرداری اور شریف برادران کا کوئی سیاسی مستقبل نہیں ہے، جس پر نیب کیسز ہوں گے عمران خان اس کو برداشت نہیں کریں گے۔ انہوں نے کہا پاکستان ریلوے معیشت کی ریڑھ کی ہڈی ہے، وزیراعظم کی موجودگی میں جلد ایم ایل ون پر دستخط ہوں گے، ریلوے کے نئے منصوبوں سے ڈیڑھ لاکھ افراد کو روزگار ملے گا، ایم ایل ون میں ٹرین کی سپیڈ کم سے کم 160 کلو میٹر فی گھنٹہ ہوگی، ایم ایل ون کے بعد کراچی اور لاہور کے درمیان 8 گھنٹے کا سفر ہو جائے گا۔

  • ورلڈ کپ میں فکسنگ کی بو نہیں آنی چاہیے: وزیراعظم کا کرکٹرز کو حکم

    وزیراعظم کے ساتھ قومی کرکٹرز کی ملاقات کی اندرونی کہانی سامنے آگئی۔ عمران خان نے کرکٹرز کو مشکوک افراد سے دور رکھنے کی ہدایت کر دی۔ عمران خان کا قومی کرکٹرز سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا مجھے ورلڈ کپ میں فکسنگ کی بو نہیں آنی چاہیے، سب جانتے ہیں مجھے کرپشن برداشت نہیں چاہیے وہ کسی بھی میدان میں ہو، آپ کرکٹرز ملک کے سفیر ہیں، پاکستان کا نام روشن کریں۔ وزیراعظم کا مزید کہنا تھا کسی نے ملک کی بدنامی کی اسے نہیں چھوڑوں گا، کسی کرکٹر کو کوئی بھی مسئلہ ہے مجھے بتائیں، بڑے دل سے جائیں اور قوم کو خوش کریں۔ یاد رہے گزشتہ روز وزیراعظم سے قومی کرکٹ ٹیم کے کھلاڑیوں اور کرکٹ بورڈ حکام نے ملاقات کی۔ جس میں عمران خان کو ورلڈ کپ کی تیاریوں پر بریفنگ دی گئی۔ واضح رہے ورلڈکپ اور دورہ انگلینڈ کے لیے قومی ٹیم کا اعلان کر دیا گیا، قومی سکواڈ سرفراز احمد (کپتان)، فخر زمان، امام الحق، عابد علی، بابر اعظم، شعیب ملک، محمد حفیظ، شاداب خان، عماد وسیم، حسن علی، فہیم اشرف، شاہین آفریدی، جنید خان، محمد حسنین اور حارث سہیل پر مشتمل ہے۔ قومی سلیکشن کمیٹی نے محمد عامر اور آصف علی کو انگلینڈ کیخلاف سیریز کیلئے منتخب کرلیا جو 2 اضافی کھلاڑیوں کی حیثیت سے 17 رکنی ٹیم کے ساتھ انگلینڈ جائیں گے البتہ کارکردگی کی بنیاد پر ان کی 15 رکنی ورلڈ کپ سکواڈ میں شمولیت کا چانس موجود ہے۔

  • مقبوضہ کشمیر: انتخابی ناٹک کا دوسرا شو فلاپ، ایک ووٹ بھی نہ ڈالا گیا

    مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے انتخابی ڈرامے کا دوسرا مرحلہ بھی فلاپ ہوگیا، سری نگر میں لوک سبھا کے انتخابات میں 90 پولنگ بوتھ پر ایک ووٹ بھی نہیں ڈالا گیا۔ بھارتی حکومت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں انتخابات کے ڈھونگ پر کشمیریوں کا بائیکاٹ جاری ہے، دوسرے مرحلے میں سری نگر اور ادھم پور میں ووٹنگ کرائی گئی۔ بھارتی میڈیا کے مطابق کشمیریوں نے انتخابات کا مکمل بائیکاٹ کر دیا، سری نگر کے حلقے میں 85 فیصد ووٹرز نے ووٹ کا حق استعمال نہیں کیا۔ سری نگر کے 90 پولنگ بوتھ پر ایک ووٹ بھی نہیں ڈالا گیا، کل جماعتی حریت کانفرنس نے بھارتی انتخابی ڈرامے کے مکمل بائیکاٹ کی اپیل کی تھی۔