نیب کا آج سے ٹیکس معاملات میں مداخلت نہ کرنے کا اعلان

چیئرمین نیب کا کہنا ہے کہ قومی احتساب بیورو آج کے بعد سے ٹیکس معاملات میں مداخلت اور کسی تاجر یا بزنس مین کو کال نہیں کرے گا۔ اسلام آباد میں اہم پریس کانفرنس کرتے ہوئے قومی احتساب بیورو ( نیب ) کے چیئرمین جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے تاجر برادری اور ٹیکس سے متعلق اہم اعلانات کرتے ہوئے کہا ہے کہ نیب کا ادارہ آج سے کسی بھی بزنس مین کو فون نہیں کرے گا، نیب آج کے بعد ٹیکس سے متعلق کسی معاملے پر مداخلت بھی نہیں کرے گا۔ چیئرمین نیب کا مزید کہنا تھا کہ ٹیکس بچانے کے معاملات اگلے ہفتے سے ایف بی آر دیکھے گا، بزنس مین کو نیب کی جانب سے نوٹس بھیجا جائے گا۔ ٹیکس بچانے یا بینک ڈیفالٹ کا معاملہ متعلقہ بینک یا اسٹیٹ بینک دیکھے گا۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی بزنس مین کو نیب کا افسر کوئی کال نہیں کرے گا، بزنس مین کو نیب کی جانب سے نوٹس بھیجا جائے گا، سوالنامے کے جواب میں بھی تسلی بخش جواب نہ آئے تو پھر زحمت دی جائے گی۔ اس موقع پر انہوں نے تاجر برادری کی جانب سے لگائے گئے الزامات کی سختی سے تردید کرتے ہوئے کہا کہ سعودی ماڈل کے اختیارات کی کبھی خواہش نہیں کی، ادارے پر الزام لگیں گے تو بطور چیئرمین جواب دینے کا حق رکھتا ہوں۔ تاجروں کے بعض تحفظات کی نفی کرتا ہوں۔ انہوں نے واضح کرتے ہوئے کہا کہ پالیسیاں بنانے میں نیب کا کوئی ہاتھ نہیں ہے۔